ھم لوگ نہ تھے ایسے

ھم لوگ نہ تھے ایسے
ہیں جیسے نظر آتے
اے وقت گواہی دے
ھم لوگ نہ تھے ایسے
یہ شہر نہ تھا ایسا
یہ روگ نہ تھے ایسے
دیوار نہ تھے رستے
زندان نہ تھی بستی
آزار نہ تھے رشتے
خلجان نہ تھی ہستی
یوں موت نہ تھی سستی
یہ آج جو صورت ہے
حالات نہ تھے ایسے
یوں غیر نہ تھے موسم
دن رات نہ تھے ایسے
تفریق نہ تھی ایسی
سنجوگ نہ تھے ایسے
اے وقت گواہی دے
ھم لوگ نہ تھے ایسے

امجد اسلام امجد کی یہ نظم کافی عرصہ پہلے پڑھی تھی، اور مجھے بہت اچھی لگتی ہے۔

والسلام!

Advertisements

9 تبصرے »

  1. Asma said

    just testing!

  2. awesome 🙂

  3. اسما آپکا ايک اور بلاگ بہت اچھا ٹمليٹ ہے مگر اس ميں پہلا فونٹ ٹوہوما رکھا گيا ہے آپ پہلا فونٹ اگر اردو نسخ ايشا ٹايپ رکھيں تو اردو اور زيادہ اچھی لگے گی

  4. اجمل said

    میں اس نظم کے مضمون سے کچھ متفق نہیں ہوں۔ ” ہماری چال بے ڈھنگی جو پہلے تھی وہ اب بھی ہے”۔

  5. MashaAllah, awesome! and i am in love with the template! 🙂

  6. Asma said

    Wassalam !!

    Well, Jahanzaib actually i’ve kept the title’s and comment’s part in tahoma teh main body is in Nafees web naskh … !

    i would try other fonts again 🙂

  7. Asma said

    Oh Uncle ajmal, well atually poets do live in euphoric world …!

    🙂 but in general opinion , previous days … as people of all times say , were better … maybe after 40 years.. if we survive , we would be saying the same too!!!

    Wassalam n Allah hafiz
    thanks Nj:)

  8. اجمل said

    یہ ایک رسم ہے شاید جو نجانے کب سے چلی آتی ہے۔ ضرب المثل ہے ” ماضی ہمیشہ سہانہ لگتا ہے ” اور ہر بوڑھی نسل جوان نسل کو اپنے سے کمتر ظاہر کرنے کی ناکام کوشش کرتی ہے۔ ایک پنجابی کا لطیفہ ہے ۔ ایک بوڑھا سڑک پر جا رہا تھا۔ پھسلا اور گر گیا۔ کہنے لگا ” ہائے جوانیے ” ادھر ادھر دیکھا کوئی آدمی نہ دیکھ کر بولا ” جوانی وچ بڑے پہاڑ ٹاندھے ساں "

  9. Asma said

    Very well said 🙂

    As atta ul haq qasmi sahib had written once that [was originally in urdu but …]there was an old man sitting in a train. With him some mischevious youngsters were also travelling. He said for you Iqbal has said that

    Nayee tehzeeb kay anday hain ganday”

    One youth said: "baba jii jab iqbal nay yah kaha tha tab aap nayee tehzeeb thay hum nahiin :)”

    Wassalam

RSS feed for comments on this post · TrackBack URI

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: