ہم وطن

ہم وطن ! یہ گلستاں تیرا بھی ہے میرا بھی ہے

اس کا ہر سود و زیاں تیرا بھی ہے میرا بھی ہے

قائدِ اعظم کی کہتے ہیں امانت ہم جسے

ورثہ یہ اے مہرباں! تیرا بھی ہے میرا بھی ہے

وقت کا ہے یہ تقاضہ متحد ہو جائیں ہم

کب سے دشمن آسماں تیرا بھی ہے میرا بھی ہے

سوچ تو، گلشن کی بربادی کا ہو گا کیا حال

شاخِ گل پہ آشیاں تیرا بھی ہے میرا بھی ہے

آبِ راوی ہو کہ آبِ سندھ، ہے سب کے لیئے

دامنِ موجِ رواں تیرا بھی ہے میرا بھی ہے

(راغب مراد آبادی)

Advertisements

3 تبصرے »

  1. T M said

    جشن ِ آذادی مُبارک

    + very interesting

    it was the first time i read this nazm

  2. hamara bhi hai yeh sirf mera tera ,,,

  3. Asma Mirza said

    me too @ tm 🙂

    and @ harris … bhayee meri nahi hay naa so couldnt do anything with it 🙂

RSS feed for comments on this post · TrackBack URI

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: