آج کے نام ۔ فیض

آج کے نام ۔ فیض

آج کے نام

اور

آج کے غم کے نام

آج کا غم کے ہے زندگی کے بھرے گلستاں سے خفا

ذرد پتوں کا بن

ذرد پتوں کا بن جو مرا دیس ہے

درد کا انجمن جو مرا دیس ہے

کلرکوں کی افسردہ جانوں کے نام

کرم خوردہ دلوں اور زبانوں کے نام

پوسٹ مینوں کے نام

تانگے والوں کے نام

ریل بانوں کے نام

کارخانوں کے بھولے جیالوں کے نام

بادشاہِ جہاں، والیِ ما سوا، نائب للہ فی الارض، دھقاں کے نام

جس کی ڈوروں کو ظا لم ہںکا لے گئے

جس کی بیٹی کو ڈاکو اٹھالے گئے

ہاتھ بھر کھیت سے اک انگشت پتوار سے کاٹ لی ہے

دوسری مالئے کے بہانے سے سرکار نے کاٹ لی ہے

جس کے پگ زور والوں کے پاؤں تلے

دھجیاں ہو گئ ہے

ان دکھی ماؤں کے نام

رات میں جن کے بچے بلکتے ہیں اور

نیند کی مار کھائے ہوئے بازوؤ ں سے سنبھلتے نہیں

دکھ بتاتے نہیں

منتوں زریعوں سےبہلتے نہیں

ان حسیناؤں کے نام

جنکی آنکھوں کے گل

چلمنوں اور دریچوں کی بیلوں پہ بیکار کھل کھل کے

مرجھاگئے ہیں

اَن بیاہتاؤ ں کے نام

جنکے بدن

بے محبت ریا کار سیجوں پہ سج سج کے اکتاگئے ہیں

بیوائوں کے نام

کتاریوں اور گلیوں محلوں کے نام

جن کی ناپاک خاشا ک سے چاند راتوں

کو آ آ کہ کرتے ہیں اکثر وضو

جن کی سایوں میں کرتی ہے آہ و بکا

آنچلوں کی حنا

چوڑیوں کی کھنک

کاکلوں کی مہک

آرزو مند سینوں کی اپنے پسینےمیں جلنے کی بو

پڑھانے والوں کے نام

وہ جو اصحاب طبل و علم

کی دروں پر کتاب اور قلم

کا تقاضا لیئے ہاتھ پھیلائے

پہنچے، مگر لوٹ کر گھر نہ آئے

وہ معصوم جو بھولپن میں

وہاں اپنے ننھے چراغوں میں لاؤ کی لگن

لے کے پہنچے جہاں

بنٹ رہی تھی گھٹا ٹوپ، بے انت راتوں کے سائے

ان اسیروں کے نام

جن کے سینوں میں فردا کی شباتاب گوہر

جیل خانوں کی شوریدہ راتوں کی سر سر میں

جل جل کے انجم نماں ہو گئ ہیں

آنے والے دنوں کے سفیروں کے نام

وہ جو خوشبوئ گل کی طرح

اپنے پیغام پر خود فدا ہو گئے ہیں

(نا مکمل اخ تمام)

copied from this blog post

Advertisements

10 تبصرے »

  1. PuRe said

    موقع کی مناسبت سے انتہاءی مناسب نظم ہے۔ بہت خوب۔

  2. $handanay said

    thank you, hey can i add yew 2 my links haan? 🙂

  3. Asma said

    Zabardast …!!

    And welcome on board!

  4. PuRe said

    اسماء جی! میں نے کوشش کی تھی آپ کو میل میں سب بتانے کی مگر لگتا ہے کہ شاید وہاں الفاظ درست صورت مےں آپ تک نہیں پہنچ سکے۔ میرا سوال یہ تھا کہ آیا اب میں اس قابل ہوں کہ میں بیاض کا حصہ بن سکوںَ
    شکریہ

  5. $handanay said

    vonderful, thanks. 🙂

  6. PuRe said

    شندانے میں کچھ مخمصے میں ہوں، اگر میں کوءی نظم پوسٹ کرنا چاہوں تو مجھے کیا کرنا ہو گا؟ مجھے شدت سے رہنماءی کی ضرورت ہے۔ شکریہ

  7. PuRe said

    And hay $handanay, you can add me into your links.. 🙂 no probs here…

  8. دل ناامید تو نہیں ، ناکام ہی تو ہے

    لمبی ہے غم کی شام ، شام ہی تو ہے

  9. PuRe said

    سماعتوں کی درخشاں تجلیوں کی قسم
    جچا نہ کؤی بھی لہجا تیرے کلام کے بعد

  10. Dinky Mind said

    listening to it now…It’s awesome

RSS feed for comments on this post · TrackBack URI

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: