غزل

جب بھي مجھے آمد ہوتي ہے
بيگم ميري بجنگ آمد ہوتي ہے

پتھر دلوں کو پل ميں موم کرے
ہاۓ کيا چيز خوشامد ہوتي ہے

محبت نہيں پابند کسي اصول کي
يہ بن کسٹم کے برآمد ہوتي ہے

بڑھاپے کي نشاني ياد رکھنا
بيوي گھرميں خاوند ہوتي ہے

ہوجاؤکمر بستہ واہ واہ کرنے والو
محفل ميں شاعر کي آمد ہوتي ہے

ميراپاکستان

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: