تقسيم

يہ حساب کا بڑا ضروري قاعدہ ہے، سب سے زيادہ جھگڑے اسي پر ہوتے ہيں۔

تقسيم کا مطلب بے بانٹنا
اندھوں کا آپس ميں ريوڑياں بانٹنا
بندر کا بليوں ميں روٹي بانٹنا
چوروں کا آپس ميں مال بانٹنا
اہلکاروں کا آپس ميں رشوت بانٹنا
مل بانٹ کر کھانا اچھا ہوتا ہے
دال تک جوتوںمیں بانٹ کر کھاني چاہئيے
ورنہ قبض کرتي ہے

تقسيم کا طريقہ کچھ مشکل نہيں ہے
حقوق اپنے پاس رکھئيے
فرائض دوسروں ميں بانٹ ديجئے
روپيہ پيسہ اپنے کَھسے ميں ڈالئيے
قناعت کي تلقين دوسروں کو کيجئے

 

آپ کو مکمل پہاڑہ مع گر ياد ہو تو کسي کو تقسيم کي کانوں کان خبر نہيں ہوسکتي، آخر کو 12 کروڑ کي دولت کو 22 خاندانوں نے آپس ميں تقسيم کيا ہي ہے؟ کسي کو پتہ چلا؟

تفريق کے قاعدے سے دودھ ميں سے مکھي نکالو۔

آدمي ضرب مسلسل کي تاب کہاں تک لاسکتا ہے؟

جو اندھے نہيں وہ بھي ريوڑياں اپنوں ہي ميں کيوں بانٹتے ہيں؟

 

 

۔۔۔ ابن انشاء – اردو کی آخری کتاب ۔۔۔

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: