Archive for شاعری

کٹھن ہے راہ

کٹھن ہے راہ گزر تھوڑي دور ساتھ چلو
بہت کڑا ہے سفر تھوڑي دور ساتھ چلو

تمام عمر کہاں کوئي ساتھ ديتا ہے
يہ جانتا ہوں مگر تھوڑي دور ساتھ چلو

نشے ميں چور ہوں ميں بھي تمہيں ہوش نہيں
بڑا مزہ ہو اگر تھوڑي دور ساتھ چلو

يہ ايک شب کي ملاقات بھي غنيمت ہے
کسے ہےکل کي خبر تھوڑي دور ساتھ چلو

ابھي تو جاگ رہے ہيں چراغ راہوں کے
ابھي ہے دور سحر تھوڑي دور ساتھ چلو

طواف منزل جاناں ہميں بھي کرنا ہے
فراز تم بھي اگر تھوڑي دور ساتھ چلو

۔۔۔ احمد فراز ۔۔۔

Advertisements

Comments (9)

خواب مرتے نہیں

خواب مرتے نہیں


خواب دل ہیں نہ آنکھیں

نہ سانسیں کہ جو

ریزہ ریزہ ہوئے تو بکھر جائیں گے

جسم کی موت سے بھی یہ نہ مر جائیں گے

خواب مرتے نہیں

خواب تو روشنی ہیں

نوا ہیں

ہوا ہیں

جو کالے پہاڑوں سے رکتے نہیں

ظلم کے دوزخوں سے پُھکتے نہیں

روشنی اور نوا اور ہوا کے عَلَم

مقتلوں میں پہنچ کر بھی جھکتے نہیں

خواب تو حرف ہیں

خواب تو نور ہیں

خواب تو منصور ہیں


خواب مرتے نہیں

احمد فراز

Comments (8)

احمد فراز – کٹھن ہے راہ

کٹھن ہے راہ گزر تھوڑي دور ساتھ چلو

بہت کڑا ہے سفر تھوڑي دور ساتھ چلو

تمام عمر کہاں کوئي ساتھ ديتا ہے

يہ جانتا ہوں مگر تھوڑي دور ساتھ چلو

نشے ميں چور ہوں ميں بھي تمہيں ہوش نہيں

بڑا مزہ ہو اگر تھوڑي دور ساتھ چلو

يہ ايک شب کي ملاقات بھي غنيمت ہے

کسے ہےکل کي خبر تھوڑي دور ساتھ چلو

ابھي تو جاگ رہے ہيں چراغ راہوں کے

ابھي ہے دور سحر تھوڑي دور ساتھ چلو

طواف منزل جاناں ہميں بھي کرنا ہے

فراز تم بھي اگر تھوڑي دور ساتھ چلو

۔۔۔ احمد فراز ۔۔۔

Comments (5)

آؤ وعدہ کریں

آؤ وعدہ کریں
آج کے دن کی روشن گواہی میں ہم
دیدہِ دل کی بے انت شاہی میں ہم
زیرِ دامانِ تقدیسِ لوح و قلم
اپنے خوابوں، خیالوں کی جاگیر کو
فکر کے موءقلم سے تراشی ہوئی
اپنی شفاف سوچوں کی تصویر کو
اپنے بے حرف ہاتھوں کی تحریر کو، اپنی تقدیر کو
یوں سنبھالیں گے، مثلِ چراغِ حرم
جیسے آندھی میں بے گھر مسافر کوئی
بجھتی آنکھوں کے بوسیدہ فانوس میں
پہرہ داروں کی صورت چھپائے رکھے
جانے والوں کے دھندلے سے نقشِ قدم
آج کے دن کی روشن گواہی میں ہم – پھر ارادہ کریں
جتنی یادوں کے خاکے نمایاں نہیں
جتنے ہونٹوں کے یاقوت بے آب ہیں
جتنی آنکھوں کے نیلم فروزاں نہیں
جتنے چہروں کے مرجان زرداب ہیں
جتنی سوچیں بھی مشعلِ بداماں نہیں
جتنے گل رنگ مہتاب گہناگئے – جتنے معصوم رخسار
مرجھا گئے
جتنی شمعیں بجھیں ، جتنی شاخیں جلیں
سب کو خوشبو بھری زندگی بخش دیں، تازگی بخش دیں
بھر دیں سب کی رگوں میں لہو نم بہ نم
مثلِ ابرِ کرم رکھ لیں سب کا بھرم
دیدہ و دل کی بے انت شاہی میں ہم
زخم کھائیں گے حسنِ چمن کے لئیے
اشک مہکائیں گے مثلِ رخسارِ گل
صرف آرائشِ پیرہن کے لئیے، مسکرائیں گے رنج و غم
دہر میں
اپنی ہنستی ہوئی انجمن کے لئیے
طعنِ احباب، سرمایہ کج دل، بجز اغیار سہہ لیں گے
فن کے لئیے
آؤ وعدہ کریں
سانس لیں گے متاعِ سخن کے لئیے
جان گنوائیں گے ارضِ وطن کے لیے
دیدہ و دل کی شوریدگی کی قسم
آسمانوں سے اونچا رکھیں گے عَلم
آؤ وعدہ کریں
آج کے دن کی روشن گواہی میں ہم

۔۔۔ محسن نقوی ۔۔۔

Comments (2)

ھمتِ التجا نہیں باقی

ھمتِ التجا نہیں باقی

 

ضبط کا حوصلہ نہیں باقی

 

اک تری دید چھن گئ مجھ سے

 

ورنہ دنیا میں کیا نہیں باقی

 

اپنے مشقِ ستم سے ہاتھ نہ کھیںچ

 

میں نہیں یا وفا نہیں باقی

 

ترے چشمِ عالم نواز کی خیر

 

دل میں کوئئ گلہ نہیں باقی

 

ہو چکا ختم عہدِ ہجر و وصال

زندگی میں مزا نہیں باقی

Comments (7)

زندگی کی راہوں میں

زندگی کی راہوں میں

 

بار ہا یہ دیکھا ہے

 

صرف سُن نہیں رکھا

 

خود بھی آزمایا ہے

 

جو بھی پڑھتے آئے ہیں

 

اسکو ٹھیک پایا ہے

 

اسطرح کی باتوں میں

 

منزلوں سے پہلے ہی

 

ساتھ چھوٹ جاتے ہیں

 

لوگ روٹھ جاتے ہیں

 

یہ تمہیں بتا دوں میں

 

چاہتوں کے رشتوں میں

 

پھر گرہ نہیں لگتی

 

لگ بھی جائے تو اُس میں

 

وہ کشش نہیں رہتی

 

ایک پھیکا پھیکا سا رابطہ تو رہتا ہے

 

تازگی نہیں رہتی

 

۔۔۔ روح کے تعلق میں

زندگی نہیں رہتی ۔۔۔

 

بات پھر نہیں بنتی

 

لاکھ بار مل کر بھی

 

دل کبھی نہیں ملتے!

 

ذہن کے جھروکوں میں

 

سوچ کے دریچوں میں

 

تتلیوں کے رنگوں میں

 

پھول پھر نہیں کھلتے!

 

اس لئیے میں کہتا ہوں

 

اس طرح کی باتوں میں

 

احتیاط کرتے ہیں

 

اسطرح کی باتوں سے اجتناب کرتے ہیں!

 

(محسن نظامی)

Comments (3)

ہوائے شام کے رنگیں دیار جلنے لگے

ہوائے شام کے رنگیں دیار جلنے لگے
ہوئی جو شام تو جھکّڑ عجیب چلنے لگے
تھی شام زہر رنگ میں ڈوبی ہوئی کھڑی
پھر اک ذرا سی دیر میں منظر بدل گیا
یاد بھی ہیں اے منیر اس شام کی تنہائیاں
ایک میداں اک درخت اور تو خدا کے سامنے
شفق کا رنگ جھلکتا تھا لال شیشوں میں
تمام اجڑا مکاں شام کی پناہ میں تھا
شام کے رنگوں میں رکھ کر صاف پانی کا گلاس
آبِ سادہ کو حریف رنگِ بادہ کردیا

تبصرہ کریں

Older Posts »